تاجر تنظیموں اور اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ اتفاق رائے سے مارکیٹ اور کاروبار بند کرنے کے اوقات کا فیصلہ کیا جائے گا،خواجہ محمد آصف

اسلام آباد(نیوز ڈیسک)وزیر دفاع خواجہ محمد آصف نے کہا ہے کہ حکومت قومی توانائی کفایت شعاری مہم کے موثر نفاذ کے لیے تاجر تنظیموں اور اسٹیک ہولڈرز کے ساتھ اتفاق رائے سے مارکیٹ اور کاروبار بند ہونے کے اوقات کا فیصلہ کرے گی۔ وہ بدھ کو وفاقی وزیر اطلاعات و نشریات مریم اورنگزیب، وفاقی وزیر توانائی انجینئر خرم دستگیر خان، وفاقی وزیر برائے توانائی خرم دستگیر خان، وفاقی وزیر ہاؤسنگ اینڈ ورکس مولانا عبدالواسع،وفاقی وزیر برائے انفارمیشن ٹیکنالوجی اور ٹیلی کمیونیکیشن، سید امین الحق، وفاقی وزیر برائے اقتصادی امور ایاز صادق اور وزیر مملکت برائے پیٹرولیم مصدق ملک کے ہمراہ آل پاکستان انجمن تاجران کے نمائندوں کے ساتھ مشاورتی اجلاس سے خطاب کر رہے تھے۔ وزیر دفاع نے شرکاء کو تجارتی شعبے میں کم استعمال کے ذریعے توانائی کے تحفظ کو یقینی بنانے کے حکومتی وژن سے آگاہ کیا۔ انہوں نے کہا کہ اس اقدام کا مقصد ملک کے غیر ملکی ذخائر پر پڑنے والے بوجھ کو بھی کم کرنا ہے جو بجلی کی پیداوار کو یقینی بنانے کے لیے ہر سال تیل اور گیس کی درآمد کی مد میں پڑتا ہے۔ وزیر دفاع خواجہ محمد آصف نے کہا کہ بجلی کی پیداوار کے لیے فاصل فیول کا درآمدی بل 80 بلین ڈالر سالانہ کے کل درآمدی اخراجات کا 20 فیصد ہے جسے ملک کے معاشی وسائل پر بڑھتے ہوئے بوجھ کی وجہ سے مزید برداشت نہیں کیا جا سکتا۔ انہوں نے مزید کہا کہ ملک کو سال میں 365 دن مکمل چمکتا ہواسورج میسر ہوتا ہے،اسے سستی اور ماحول دوست توانائی پیدا کرنے کے لیے اچھی طرح سے استعمال کیا جا سکتا ہے۔ آل پاکستان انجمن تاجران کے چیئرمین محمد نعیم میر اور صدر اجمل بلوچ سمیت دیگر اجلاس شرکاء رنے حکومت کی جانب سے بازاروں کی بندش کے اوقات 8 بجے، ڈائننگ ہال رات 10 بجے اور ریستوراں رات 10 بجے بند کرنے کی تجویز پر اپنی سفارشات اور تجاویز پیش کیں۔ سیکرٹری وزارت بجلی راشد محمود لنگڑیال نے حکومت کی قومی توانائی کفایت شعاری مہم کے بارے میں بریف دی جس کے بعد فورم میں موجود تاجروں کے نمائندوں سے تفصیلی تبادلہ خیال کیا گیا۔