سابق سپیکر پنجاب اسمبلی نے صدر سے انتخابات کی تاریخ کے تعین کی استدعا کر دی

لاہور(اے بی این نیوز)پنجاب میں عام انتخابات کی تاریخ کے تعین کے معاملہ پر سسابق سپیکر پنجاب اسمبلی سبطین خان نے صدر پاکستان سے انتخابات کی تاریخ کے تعین کی استدعا کر دی۔سابق سپیکر پنجاب اسمبلی سبطین خان نے صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی کو خط لکھ دیا، خط کی نقول چیف الیکشن کمشنر اور گورنر پنجاب کو بھی بھجوا دی گئیں۔سابق صوبائی سپیکر نے خط میں لکھا کہ وزیراعلی پنجاب نے 12 جنوری کو اسمبلی کی تحلیل کی سمری گورنر کو بھجوائی، پنجاب کی صوبائی اسمبلی 14 جنوری کو تحلیل کر دی گئی، میں نے 20 جنوری کے اپنے خط کے ذریعے گورنر پنجاب کو 90 روز کی آئینی مدت کے دوران انتخابات کے انعقاد کیلئے تاریخ کے تعین کی نشاندہی کی۔سابق سپیکر پنجاب اسمبلی نے مزید کہا کہ الیکشن کمیشن آف پاکستان نے 24 جنوری کے اپنے خط کے ذریعے گورنر پنجاب سے انتخابات کی تاریخ کے تعین کا تقاضا کیا، گورنر نے موقف اختیار کیا کہ چونکہ اسمبلی ان کے دستخطوں سے تحلیل نہیں ہوئی چنانچہ آرٹیکل 105(3) کا ان پر اطلاق نہیں ہوتا۔انہوں نے خط میں لکھا کہ پاکستان تحریک انصاف نے معاملے کو لاہور ہائی کورٹ میں چیلنج کیا، لاہور ہائی کورٹ نے الیکشن کمیشن آف پاکستان کو گورنر سے مشاورت کے بعد انتخابات کی تاریخ کے تعین کے احکامات صادر کئے، لاہور ہائی کورٹ کے احکامات پر گورنر اور الیکشن کمیشن کے مابین ناقابل جواز تاخیر کا مظاہرہ کیا گیا۔سابق سپیکر پنجاب اسمبلی نے لکھا کہ آئینی فرائض کی انجام دہی اور عدالتی احکامات پر عملدرآمد میں ناکامی آئین سے صریح انحراف ہے، الیکشن کمیشن کی جانب سے آئین سے انحراف کی راہ روکنے کیلئے سربراہِ ریاست کی فوری مداخلت ناگزیر ہے۔انہوں نے لکھا کہ بطور صدر مملکت آپ نے آئین کے تحفظ اور دفاع کا حلف اٹھا رکھا ہے، الیکشن ایکٹ 2017 کا آرٹیکل 57(1) آپ کو انتخابات کے انعقاد کے آئینی تقاضے کی انجام دہی کے اختیارات سونپتا ہے، بطور صدر مملکت آپ آئین سے مزید انحراف کی راہ روکنے کیلئے فوری طور پر پنجاب میں انتخابات کی تاریخ کا اعلان کریں۔