جامعہ کراچی کے اساتذہ کا بائیکاٹ جاری، ہزاروں طلبا کا مستقبل دائو پر لگ گیا

کراچی(نیوزڈیسک)جامعہ کراچی کے اساتذہ کی جاری مکمل بائیکاٹ کے باعث مسلسل دوسرے روز بھی ہزاروں طلبہ مشکلات کا شکار رہے۔ رپورٹ کے مطابق اساتذہ کی جانب سے بائیکاٹ اس حقیقت کے باوجود بھی جاری رکھا گیا جب کہ وزیراعلیٰ سندھ نے جامعہ کراچی کو سلیکشن بورڈز بنانے کی اجازت دے دی۔اس سوال پر کہ کیا اساتذہ اپنا احتجاج جاری رکھیں گے جب کہ سلیکشن بورڈز کو باضابطہ طور پر اجازت دے دی گئی ہے کراچی یونیورسٹی ٹیچرز سوسائٹی (کٹس) کے نائب صدر ڈاکٹر غفران عالم نے جواب دیا کہ ہماری باڈی نے وائس چانسلر سے سلیکشن بورڈز کا شیڈول جاری کرنے کا مطالبہ کیا تھا۔

انہوں نے کہا کہ ہم اپنے مطالبے کے مطابق سلیکشن بورڈز کے مکمل شیڈول کے منتظر ہیں، ابھی تک ہمیں انتظامیہ کی جانب سے کوئی مثبت اشارہ نہیں ملا۔ پیپلز اسٹوڈنٹس فیڈریشن (پی ایس ایف) سے تعلق رکھنے والے طلبا کے ایک گروپ نے یونیورسٹی کے ایڈمنسٹریشن بلاک کے سامنے مظاہرہ کیا۔احتجاج کرنے والے طلبہ نے بائیکاٹ کرنےوالے اساتذہ کے خلاف نعرے لگائے اور کہا کہ انہوں نے اپنے ذاتی مفادات کے لیے یونیورسٹی کو مفلوج قرار دیا، بعد ازاں طلبہ پرامن طور پر منتشر ہوگئے۔